وزیر اعظم کا دورہ روس

107 Views

وزیر اعظم کا دورہ روس

۔۔۔محمد امانت اللہ ۔ جدہ

وزیراعظم عمران خان کا دورہ روس بہت اہمیت کا حامل ھے۔ اس دورے کو بین الاقوامی میڈیا جس طرح سے دیکھ رہا اسکی نظیر نہیں ملتی۔
جبکہ ملک میں اپوزیشن جماعتیں
صرف اقتدار کے لیے متحد ہوئی ہیں
تجربہ نگاروں کا ماننا ھے اپوزیشن جماعتیں غیر ملکی ایجنڈے پر کام کر رہی ہیں ایسے وقت میں جب پورے خطہ میں حالات بڑی تیزی سے تبدیل ہو رہی ھے۔ اس وقت پورے ملک کو متحد ہونے کی ضرورت ھے بلخصوص سیاسی جماعتوں کو مگر پیپلز پارٹی نے وزیراعظم پاکستان عمران خان کے نہایت اہم دورہِ روس کے دوران تحریکِ عدم اعتماد پیش کرنے کی تجویز دی ہے۔
23 سال بعد پاکستان کا وزیر اعظم روس کا دورہ کر رہا ہے. جو مغربی طاقتوں کو کھٹک رہا ہے اور پاکستانی اپوزیشن اسی دورے کو سبوتاژ کرنا چاہ رہی ہے۔
کہیں یہ حرکت اس ملک کی فرمائش پر تو نہیں کہ جا رہی جسے عمران خان نے ایبسولوٹلی ناٹ کہا تھا. ؟
جس سے وزیرستان میں ڈرون حملوں کے بدلے پی پی پی حکومت کو ڈالر ملے ؟
وہی ملک جس کے چند نچلی سطح کے عہدیداروں سے ملنے کے لیے بلاول گھنٹوں سڑک کنارے بیٹھ کر انتظار کرتا رہا۔
پہلے بھارتی ایماء پر چین کا دورہ ملتوی کروانے کے لیے بھارتی دہشتگردوں نے بلوچستان میں حملے کیے۔ مگر الحمدللَّهُ حملے ناکام اور دورہ کامیاب رہا۔
وزیراعظم پاکستان عمران خان روس کے دورے پر جا رہے ہیں تو اپوزیشن میدان میں اتر آئی ھے۔
کس کی ایماء پر ؟
ظاہر ہے امریکہ کی اور بھارت کی ایماء پر امریکہ نہیں چاہتا پاکستان، چینی و روسی بلاک کا حصہ بنے اور یہ بلاک امریکہ کو چیلنج کرے ؟
اس وقت یوکرائن اور روس کے درمیان حالات نہایت کشیدہ ہیں، حالات جنگ کی طرف جا رہے ہیں۔ مگر اس انداز سے نہیں، جس انداز سے مغربی طاقتیں بالخصوص امریکہ و برطانیہ چاہتی ہیں۔
اس صورتحال میں جب دنیا روس اور یوکرائن سے دور ہونے لگی ہے۔ اپنے سفارتخانے بند کرنے لگے ہیں اپنے اپنے شہریوں کو واپسی کے احکام دئیے جا رہے ہیں۔ ایسے میں چینی و پاکستانی سفارتخانوں کا کھلا رہنا، روسی و یوکرائنی حکومتی عہدیداروں سے رابطے میں رہنا، سب کچھ نارمل چلنا یقیناً مغربی طاقتوں کو ہضم نہیں ہو رہا۔ جو اس جنگ کو بھڑکانے میں اپنا پورا زور لگا رہیں ہیں۔
ایسی صورتحال میں وزیراعظم خان کا دورہ کتنا اہم ثابت ہو سکتا ہے۔ روس اور پاکستان کے لیے نئی راہیں کھل سکتی ہیں اور ہو سکتا ہے کہ روس اور یوکرائن معاملے میں بھی مغربی خواہشات کی تکمیل نہ ہو۔
اس سے پہلے بھی مغربی طاقتیں ایران و سعودیہ کو جنگ کی نہج پہ لانے کی ہر ممکن کوشش کرتیں رہیں ہیں۔ وزیراعظم پاکستان کی کوششوں کے سبب کامیاب نہ ہوسکیں۔
وزیر اعظم عمران خان کا دورہ بڑی اہمیت کا حامل ھے پوری دنیا کی نظریں اس طرف لگی ہوئی ہیں اور اپوزیشن جماعتیں ملک میں انتشار پیدا کرنے میں سرگرم ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔