الیکشن کمیشن کا فیصلہ فوری معطل کرنے کی پی ٹی آئی استدعا مسترد

152 Views

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ این اے 75 ڈسکہ میں دوبارہ انتخابات کا حکم معطل بھی کر دیں تو کچھ نہیں ہوگا، بہتر ہے ابھی ایسے ہی چلنے دیں۔ عدالت نے الیکشن کمیشن کا فیصلہ فوری معطل کرنے کے لیے تحریک انصاف کی استدعا مسترد کر دی۔

 سماعت کے موقع پر جسٹس عمرعطا بندیال نے ریمارکس دیئے کہ ڈسکہ انتخابات میں قانون پر عمل نہیں ہوا، الیکشن کمیشن نے پولیس کے عدم تعاون کا غصہ نکالا، عدم تعاون دوبارہ پولنگ کا جواز نہیں ہوسکتا، پولیس کیخلاف تو کارروائی بھی ہوسکتی ہے، آئینی اداروں کا احترام کرتے ہیں، کمیشن کا تفصیلی فیصلہ اور جواب اہمیت کے حامل ہیں، جائزہ لے رہے ہیں انتخابات شفاف ہوئے یا نہیں۔

جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ کشیدگی شہری علاقے میں ہوئی، جہاں سے 20 پریزائیڈنگ افسران لاپتہ ہوئے وہاں فائرنگ کا کوئی واقعہ نہیں ہوا، غائب ہونے والے پریذائیڈنگ افسران صبح یکدم ایک ساتھ نمودار ہوئے، کیا وہ سب ناشتہ کرنے گئے تھے ؟ جسٹس سجاد علی شاہ کا کہنا تھا کہ الیکشن ہو رہا تھا تو آئی جی اور چیف سیکرٹری کیسے سو سکتے تھے؟۔

تحریک انصاف کے وکیل نے دلائل دیئے کہ سیکشن 9 کے تحت الیکشن کمیشن نے انکوائری کرانا تھی، انتظامی فیصلے کے لیے انکوائری کا ہونا ضروری تھا لیکن کمیشن نے ویڈیو پر انحصار کر کے فیصلہ دیا۔ الیکشن کمیشن نے ایک ڈی ایس پی کا بہانہ کر کے پورا الیکشن متنازعہ کر دیا۔

جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ الیکشن کو کالعدم کرنا انتظامی فیصلہ تھا، انتظامی فیصلہ تو فوری کرنا پڑتا ہے۔ عدالت نے مسلم لیگ ن کے وکیل سلمان اکرم راجا کو ویڈیو لنک کے ذریعے دلائل کی اجازت دیتے ہوئے سماعت آئندہ ہفتے تک ملتوی کر دی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے